Home / تعلیم / ناظم آباد کے سرکاری اسکول میں بچے مضر صحت پانی پینے پر مجبور

ناظم آباد کے سرکاری اسکول میں بچے مضر صحت پانی پینے پر مجبور

کراچی (رپورٹ: سید محمود اللہ)کراچی کے علاقے ناظم آباد میں واقع سرکاری سیکنڈری اسکول میں بدبودار اورمضر صحت پانی کی فراہمی سے1200 سے زائد طلبہ کی زندگیوں کو خطرات لاحق ہو گئے ، طلبہ بدبودار اورمضر صحت پانی پینے پر مجبور ہیں۔تفصیلات کے مطابق کراچی میں حالیہ بارشوں کے بعدسرکاری اسکولوں میں بدبودار اور مضر صحت پانی سے مختلف امراض کی شکایات کا انکشاف ہوا ہے۔کراچی کے کئی علاقوں کے سرکاری اسکولوں کی انتظامیہ نے میونسپل کارپوریشن اور یو سی سطح پر اِس کی شکایت بھی ہے مگر شہری ادارے ا بھی تک سرکاری اسکولوں میں صاف پینے کا پانی کے انتظام میں ناکام ہوچکے ہیں۔کراچی کے علاقہ ناظم آباد میں قائم ایس ایم پبلک پرائمری اور سیکنڈری اسکول میں گذشتہ ایک ہفتہ سے بد بود ار اور مضر صحت پینے کا پانی آرہا ہے جس کی وجہ سے کئی طلبہ کی حالت بگڑ چکی ہے جبکہ یوسی اور میونسپل کارپوریشن کی سطح پر تحریری شکایت بھی درج کروائی گئی ہے۔ مذکورہ اسکول میں اس وقت طلبہ کی تعداد 12سو سے زائد ہے جن کی صحت کو خطرہ لاحق ہوگیا ہے۔ محکمہ تعلیم کے ذرائع کے مطابق مذکورہ اسکول کو گذشتہ 2سالوں سے ایس ایم سی فنڈ بھی فراہم نہیں کیا گیا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ ناظم آباد میں قائم سرکاری اسکولوں میں بدبو دار اور مضر صحت پانی آنے کی شکایت موصول ہوئی ہے تاہم رابطہ کرنے پر ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر ضلع وسطی ارشد بیگ کا کہنا تھا کہ ابھی تک میرے پاس ایسی کوئی شکایت نہیں آئی ہے اس طرح کی شکایت آنے پر فوری طور پر اقدامات کئے جائیں گے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے