Home / پاکستان / وزراء مہنگائی کیخلاف کمر کس لیں،عمران خان

وزراء مہنگائی کیخلاف کمر کس لیں،عمران خان

اسلام آباد( مانیٹرنگ ڈیسک )وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بہت پہلے بتا دیا تھا کہ کرپٹ مافیا سڑکوں پر نکلے گا۔ اپوزیشن کا مقصد اپنا مفاد اور کرپشن کا تحفظ ہے۔ انھیں ڈر ہے کہ کہیں حکومت اصلاحاتی ایجنڈے میں کامیاب نہ ہو جائے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مولانا فضل الرحمان اپنے مسائل بتا رہے ہیں حالانکہ عام لوگوں کا مسئلہ مہنگائی ہے، میری ترجیح عوامی مسائل کا حل ہے۔تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان کے زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں جے یو آئی (ف)کے دھرنے اور مہنگائی سمیت مختلف امور پر تفصیلی غور کیا گیا۔ وزیراعظم نے وزرا کو سختی سے ہدایت کی کہ وہ اپنے محکموں کے منصوبے جلد مکمل کریں۔ اس کے علاوہ حکومتی ارکان مہنگائی کےاسباب کی نشاندہی کریں، مہنگائی کنٹرول کرنے کے حوالے سے اقدامات خود مانیٹر کروں گا۔جمعیت علمائے اسلام (ف)کے امیر مولانا فضل الرحمان کے حکومت مخالف دھرنے پر بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ دھرنے والوں کیساتھ حکومتی کمیٹی معاملات دیکھ رہی ہے اور اپنا کام کر رہی ہے، جلد معاملہ حل ہو جائے گا۔وزیراعظم نے ہدایات جاری کی کہ وزرا مہنگائی کے خلاف کمر کس لیں۔ اگلے چند روز میں مہنگائی پر مل کر قابو پانا ہے۔ مہنگائی کا کنٹرول حکومت کی اولین ترجیح ہے۔اس کے علاوہ وزیراعظم کے زیر صدارت پارٹی ترجمانوں کا اجلاس بھی ہوا جس میں ملک کی سیاسی اورمعاشی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔ معاشی ٹیم نے نئے معاشی اعدادوشمار پر بریفنگ دی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے ملکی معاشی صورتحال پر اطمینان کا اظہار رتے ہوئے کہا کہ گزشتہ سال خسارہ 13 ارب ڈالرتھا جسے اس سال 7 ارب ڈالر تک لایا گیا ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ حکومت سنبھالی تو 20 ارب ڈالر کا کرنٹ اکانٹ خسارہ تھا۔ حکومتی پالیسی سے کرنٹ اکانٹ خسارہ 32 فیصد کم ہوا۔انہوں نے کہا کہ بہت پہلے بتا دیا تھا کہ کرپٹ مافیا سڑکوں پر نکلیں گے۔ اپوزیشن کا مقصد اپنا مفاد اور کرپشن کا تحفظ ہے۔ انھیں ڈر ہے کہ کہیں حکومت اصلاحاتی ایجنڈے میں کامیاب نہ ہو جائے۔ان کا کہنا تھا کہ حکومت کی کامیابی سے ان کی سیاسی دکانیں بند ہو جائیں گی۔ کرپٹ مافیا ملک میں افراتفری اور غیر یقینی پھیلانا چاہتا ہے۔دریں اثناءوزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ملک کے معاشی حالات بہتری کی طرف جارہے ہیں ، روپے کی قدر بہتر ہورہی ہے، برآمدات بڑھ رہی ہیں، سرمایہ کاروں کی جانب سے حکومتی پالیسیوں اور اب تک اٹھائے جانے والے اقدامات پر اعتماد نہایت حوصلہ افزا ہے، اس تبدیلی کا اعتراف بین الاقوامی اداروں کی جانب سے کیا گیا ،فضا کو مزید بہتر کرنے کی ضرورت ہے،پی ٹی آئی حکومت کا سب سے بڑا چیلنج اسٹیٹس کو تبدیل کرنا ہے،نیا پاکستان پرانے اور روایتی طریقوں سے نہیں چلایا جا سکتا،تبدیلی کے خواب کو عملی جامہ پہنانے کے لئے روایتی طریقوں کو خیر آباد کہہ کر عوام کی فلاح کو مقدم رکھنا ہوگا ،سی پیک پاکستان کے لئے گیم چینجر ثابت ہوگا، سی پیک منصوبوں سے پاکستان میں ترقی کا ایک نیا باب روشن ہوگا۔ منگل کو وزیر اعظم عمران خان نے تمام وفاقی وازرتوں کے سیکرٹریز اور صوبائی چیف سیکرٹری صاحبان سے ملاقات کی جس میں مشیر برائے ادارہ جاتی اصلاحات ڈاکٹر عشرت حسین، مشیر برائے اسٹیبلشمنٹ شہزاد ارباب، معاون خصوصی شہزاد اکبر بھی موجود تھے ۔سیکرٹری صاحبان نے ادارہ جاتی کارکردگی کو بہتر بنانے کےلئے تجاویز پیش کیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے